Thursday, December 17, 2009

101- ایک نگاہ اس طرف

;;;;;

آئنہ رکھ دیا گیا عکس جمال کے لیے
پورا جہاں بنا دیا، ایک مثال کے لیے
خاک کی نیند توڑ کر آب کہیں بنا دیا
ارض و سما کے درمیاں خواب کہیں بنا دیا

خواب نمود میں کبھی آتش و باد مل گئے
شاخ پر آگ جل اٹھی، آگ میں پھول کھل گئے
ساز حیات تھا خموش، سوز و سرود تھا نہیں
اس کا ظہور ہو گیا جس کا وجود تھا نہیں

خاک میں جتنا نور ہے ایک نگاہ سے ملا
سنگ بدن کو ارتعاش دل کی کراہ سے ملا
دشت وجود میں بہار اس دل لالہ رنگ سے
رنگ حیات و کائنات اس کی بس اک امنگ سے

قرنوں کے فاصلوں میں یہ دل ہی مرے قریب تھا
قصہء ہست و بود میں کوئی مرا حبیب تھا
تیرہ و تار راہ میں ایک چراغ تھا مرا
کوچہ ء بے تپاک میں کوئی سراغ تھا مرا



ہو کے دیار خواب سے
کیسی عجب ہوا گئی
شیشہء تابدار پر
گرد ہی گرد جم گئی
بھول چکا ہے اپنی ذات
بھول گیا ہے اس کا نام
سوز و گداز کے بغیر
لب پہ درود اور سلام





مدت عمر ہو گئی اس کو عجیب حال میں
فرق ہی کچھ رہا نہیں شوق میں اور ملال میں
دل کی جگہ رکھا ہے اب، سنگ سیاہ اس طرف
ہجر و وصال کے خدا! ایک نگاہ اس طرف

;;;;;

8 comments:

Jagdish Prakash said...

Itne khoobsoorat ash'aar, itna khoobsoorat alfaz ka intekhab, itninazuk bayani, itna khafeef ehsaas. Mashallah! Kamaal ka jadoo hai aapke qalam mein!
"Shakh par aag jal uthi, aag mein phool khil gaye" yeh misra baar baar zuban par aat aata hai aur baar baar, apka qala choomne ko dil karta hai.
Jagdish Prakash

sohail said...

Boht khoob, MashaAllah!

ANAAM. JASWINDER ( 780 605 0911) said...

بہت کھوب دل کو چھوہ لیا ۔ آپ کئ اس نزر نے

alicyber said...

allah is qalam ko istmrar ke sath isitrah jumbish main rakhy Aameen

amir said...

بہت کھوب دل کو چھوہ لیا

Anonymous said...

Samina RAja aik Khobsorat Sachhi Shaira or aik bahadur khatoon, mujh jesa tifl maktab khud ko is qabil nhi samjhta k Samina Raja pay kuch keh sakon,

Asna said...

bahot pyari nazm..very touching.

hayat said...

Thank You.